Chitral Times

Nov 21, 2018

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

  • علامہ اقبال کی نظم : ہمدردی………….مترجم:زاہد علی نزاری شوتخار تورکھو

    April 9, 2018 at 10:22 pm

    ٹہنی پہ کسی شجر کی تنہا
    بلبل تھا کوئی اداس بيٹھا
    کہتا تھا کہ رات سر پہ آئی
    اڑنے چگنے ميں دن گزارا
    پہنچوں کس طرح آشياں تک
    ہر چيز پہ چھا گيا اندھيرا
    سن کر بلبل کی آہ و زاری
    جگنو کوئی پاس ہی سے بولا
    حاضر ہوں مدد کو جان و دل سے
    کيڑا ہوں اگرچہ ميں ذرا سا
    کيا غم ہے جو رات ہے اندھيری
    ميں راہ ميں روشنی کروں گا
    اللہ نے دی ہے مجھ کو مشعل
    چمکا کے مجھے ديا بنايا
    ہيں لوگ وہی جہاں ميں اچھے
    آتے ہيں جو کام دُوسرں کے

    کھوارترجمہ
    ای کنو کمبوخہ ای بلبل غیژی تان
    نیشی اسیتایچھیو،اوشوی پیریشان
    دوناوشوی کیچہ بوم چھوی سوروتین ہای
    اولویتم اوچہ اویوتم،ہنیسن پیشمان
    کیچہ بیتی تن مڑہ ہنیسین تروم
    ہار ووشکی لڑیمن اوہ موش ہوی چھوی گمان
    بلبلو ہے کیڑیکو ہواز کرہ پرای
    ای پھک انگر گوغو، آستای سے ہے نسہ تان
    حاضر اسوم مدتوت تہ سم ہردیار
    پھک گوغ بکو کیانی بوی، لوڑے مہ کورمان
    چھوی ہوی رے تو غم موکورے بس مہ اچتو گئے
    اوہ تتن روشتی کوم چو ماہ تابان
    چراغ روشن مہ اریر رب ذوالجلال
    ڑپھیاک دیوا مہ اریراللہ مہربان
    ہتے روی تان جم دنیای دونہ ہمیشہ
    کا کہ خورو کورمہ گونیان ہمیشہ خوشان
    نہ کوس کورمہ گوس، نزاری، نہ گیتی اسوس
    کھوار ترجمہ تھہ کورے آقبالو شعران

  • error: Content is protected !!