Chitral Times

Feb 7, 2023

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

بزمِ درویش۔۔۔۔۔۔۔معافی زینب معافی ……… تحریر:پروفیسر محمد عبداللہ بھٹی

Posted on
شیئر کریں:

آخر کار طویل انتظار اورجان لیوا شب و روز کے بعد معصوم زینب کا قاتل درندہ قانون کے شکنجے میںآگیا وطن عزیز پر تنی سوگ خو ف غصے کی چادر ہٹ گئی زینب کا غم21کروڑ پاکستانیوں کے دلوں میں خنجر بن کر پیوست تھا غم درد دکھ کر ب الفاظ کی گرفت سے با ہر ہیں حادثہ ایسا کہ تصور آتے ہی سانس رکنے لگتی ہے زینب کا معصوم چہرہ چہرے پر پھیلی حضرت مریم ؑ کی سی پوترتا نو ر روشنی قوس قزح کے رنگ چاندنی جیسی چمک مسکراہٹ آب زم زم مشک وغیرہ سے دھلا نازک جسم اور پھر کوڑے کا ڈھیر جہاں زینب کے جسم کو نازک گلاب کی پتیوں جیسے جسم کو پتی پتی کر کے بکھیر دیا قاتل تو پکڑا گیا لیکن جب اُس کھنڈر نما کمرے اور جنسی درندوں کی وحشت اور ظلم کا خیال آتا ہے جسم میں آتش فشاں پھٹنے شروع ہو جا تے ہیں معصوم زینب سے بربریت ظلم کا ایک ایک لمحہ صدی کے برابر تھا جانور نما جنسی درندہ عفریت اور معصوم زینب کا ش جب ظالم درندہ معصوم زینب کو لے کر جا رہا تھا قصور شہر کا کو ئی غیرت مند جوان اُس کا پیچھا کر لیتا جتنے دن معصوم پر ظلم ڈھائے گئے کوئی اُس کی مدد کو پہنچ پا تا پنجاب کی دھرتی جو غیور جوانوں کی داستانوں سے بھری پڑی ہے کو ئی جوان اُس کا مسیحا بن جا تا ڈھا ل بن جاتا حیرت ہوتی ہے یہ سوچ کر قیامت کی گھڑیاں جو معصوم زینب پر گزریں اُنہی گھڑیوں میں وطن عزیز میں زندگی پو ری رفتار اور رنگوں سے لبریز چل رہی تھی ہما را پو لیس کا شعبہ چوروں ڈکیتوں ملزموں کے پیچھے بھاگ دوڑ یا پھر نام نہاد سیاستدانوں کے پروٹوکول پر لگا ہو اتھا کا ش ہمارا پو لیس کا نظام اتنا طاقتور پھر تیلا اور انصاف پر مبنی ہو تا کہ کسی بھی انسان کو جرم کر نے سے پہلے سوبار سوچنا پڑتا کہ جیسے ہی کو ئی مجرم جرم کی طرف بڑھے گا پو لیس کا شعبہ حرکت میں آکر اُسے جرم سے روک دے گا کاش ہمارا انصاف اور عدالتی نظام اتنا انصاف پر مبنی ہو تا کہ ہر مجرم کو احساس ہو تا کہ میں جرم کر کے کسی بھی طرح سے بچ نہیں پا ؤں گا کا ش عدالتی نظام چھو ٹے بڑے امیر غریب با اثر مجرم کوفوری انصاف کی دہلیز پر لا تا لیکن عدالتی نظام کے ہو تے ہو ئے بھی معصوم زینب پر ظلم کے پہا ڑ بے دردی بے رحمی سے ڈھا ئے گئے ہما را معاشرہ اور انسانی حقوق کی علمبردار تنظیمیں شب و روز اپنی کا ر کر دگی کے ڈھول بجا تے ہیں کاش ہما را با نجھ بے حس معا شرہ اور انسانی حقوق کی علمبردار تنظیمیں اتنی بیدار چوکس ہو تیں کہ معصوم زینب جب درندگی کے بیلنے میں زندگی مو ت کی آخری سانسیں لے رہی تھی یہ تنظیمیں اُس کے لیے مسیحا کا کردار ادا کر سکتیں ۔ ہما ری خفیہ ایجنسیاں جن پر ہمیں فخر ہے کا ش وہ اپنا مثبت کردار ادا کر سکتیں ۔ ہمارا معاشرہ میڈیا ایجنسیاں ادارے حکو مت اپو زیشن جو اب انسانی حقوق کا راگ الاپ رہے ہیں زینب سے پہلے معصوم بچوں پر ہو نے والے ظلم پر آواز اٹھاتے زینب سے پہلے جن معصوم کلیوں کو اِسی بے رحمی سے کچلا گیا زینب کے قاتل نے اِس سے پہلے جن آٹھ بچیوں کے ساتھ جنسی درندگی کا مظاہرہ کیا کتنے آرام سے معاشرہ ادارے اہل قصور کے لو گ ہضم کر گئے کیا پہلے درندگی کا نشانہ بننے والی بچیاں کسی کی بیٹیاں نہیں تھیں پو لیس وزیر اعلیٰ اپو زیشن اور میڈیا اب جو حقوق کی آواز بلند کر رہے ہیں پہلے کدھر تھے اہل قصور کا احتجاج کر نا میڈیا کا شور مچانا پھر ملک کے ڈرامے فراڈی سیا ستدان بھی جگا لی کر نا شروع ہو گئے ۔ ہما ری بے حسی کا عالم ملا حظہ فرمائیں کہ اِس سے پہلے وہ درندہ بے رحمی سے بچیوں کو اپنے ظلم کا نشانہ بنا رہا تھا ۔ لیکن پو لیس عدالتی نظام میڈیا چین کی نیند سو رہے تھے جیسے گا جر مو لی کا ٹ دی گئی ہو ہما رے ملک کا یہ المیہ ہے کہ انصاف کے لیے لا شو ں کو سڑکوں پر رکھ کر ٹریفک بلاک کر نا پڑتی ہے کیو نکہ مظلوم کو اچھی طرح ادراک ہے کہ اُسے انصاف نہیں ملے گا انصاف کے لیے طا قتور با اثر سیاستدانوں کے ڈیروں پر جا کر غلا می کر نا پڑتی ہے اِن کا میراثی بننا پڑتا ہے اور پھر ڈکیت پو لیس سے انصا ف کے لیے بھی انہیں پیسے دینے پڑتے ہیں لگتا ہے ملک میں جنگل کا قانون نا فذ ہے جس کا جو دل کر تا ہے وہ کر جاتا ہے اُسے کسی قانون عدالت کا کو ئی خو ف نہیں اگر آپ زینب کے قاتل کا نفسیا تی تجزیہ کر یں تو یہ واضح ہو تا ہے کہ ملزم کو ئی بہت چالاک پھر تیلا نہیں تھا کہ اُسے پکڑا نہ جا سکے اہل محلہ اور تفتیشی ادارے ذرا سا دما غ استعمال کر کے قاتل کو پکڑ سکتے تھے شدید حیرانی والی با ت یہ ہے کہ سی سی ٹی وی کیمروں میں ملزم جس طرح ننھی زینب کو لے کر جا رہا ہے اہل محلہ آسانی سے ملزم کی چال ڈھال سے اُسے پہچان سکتے تھے ہمارا پورا سسٹم اِس قدر با نجھ اور زنگ آلود ہے کہ عام انسان اُٹھ کر بڑے سے بڑا جرم کر تا ہے لیکن اُسے کو ئی پکڑنے والا نہیں ہے اجتما عی طو ر پر بے حسی ہم پر غالب آچکی ہے ہمیں اجتما عی طو ر پر بیدار چوکس ہو نا پڑے گا اگر ہمارا پو لیس کا شعبہ اور عدالتی نظام درست سمت میں چلنا شروع کر دے تو کو ئی بھی انسان جرم کر نے سے پہلے سو با رسوچے گا زینب کے قاتل نے جب پہلی بچی کے ساتھ یہ ظلم کیاتو اُسی وقت اُسے پکڑ لینا چاہیے تھا ہما رے نظام کی کمزوری ملاحظہ فرمائیں ایک جاہل اُجڈ عام انسان سیریل کلر بن جا تا ہے اُسے پکڑنے کے لیے پو را ملک حرکت میں آتا ہے تو وہ پکڑا جاتا ہے‘ زینب پر جوظلم ہو ا ہے اِس کے ذمہ دار ہم سب ہیں قصور ہم سب کا ہے زینب کا کیس ہا ئی لا ئٹ ہو گیا حالانکہ زینب سے پہلے جو بچیاں درندگی کا شکا ر ہو ئیں اُس وقت ہمیں بیدار ہو نا چاہیے تھا زینب امین انصاری صاحب کی بیٹی نہیں تھی وہ پو ری قوم کی بیٹی تھی وہ حواکی بیٹی تھی وہ معصوم کلی رنگوں سے لبریز تتلی تھی جو ہما رے معا شرے کی بے حسی اور انصاف سے خالی اداروں کی وجہ سے ظلم کی سولی پر لٹک گئی ہما رے بانجھ زنگ آلو دہ نظام کی وجہ سے وطن عزیز کے ہر شہر گلی محلے میں ہر روز کو ئی زینب مسلی جا تی ہے کُچلی جاتی ہے ہمیں بحیثیت قوم زینب اور دوسری بچیوں سے معافی مانگنی چاہیے ہما رے تما م اداروں اور میڈیاکو زینب سے معافی مانگنی چاہیے ۔ جب تک ہم اپنی ذمہ داری احسن طریقے سے نہیں نبھا ئیں گے اُس وقت تک اِسی طرح وحشت درندگی کا یہ کھیل وطن عزیز کے ہر شہر محلے میں کھیلا جاتا رہے گا ۔ زینب کا معصوم چہرہ جب بھی سامنے آتا ہے تو خدا تعالی جو ستر ما ؤں سے بھی زیا دہ شفیق ہے اُس کی بھی بے حسی لا پرواہی بے نیازی چبھتی ہے اے خالق بے نیاز ہما رے گنا ہوں کی سزا ہمیں دیا کر زینب جیسی معصوم تتلیوں کو نہ دیا کر تو تو ستر ما ؤں سے زیا دہ شفیق ہے تیری رحمت تو غضب پر غالب ہے اے رحم دل خدا ہما ری معصوم کلیوں پر رحم فرما اے زینب ہم تجھ سے معافی مانگتے ہیں ۔


شیئر کریں: