Chitral Times

May 27, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

صوبہ بھر کے بھٹہ خشت میں کام کرنے والے مزدوروں کیلئے کم از کم اجرت کی منظوری دید ی گئی

Posted on
شیئر کریں:

پشاور ( چترال ٹائمز رپورٹ )کم از کم اجرت کا تعین کرنے کے لئے قائم صوبائی بورڈ نے صوبہ بھر میں بھٹہ خشت میں کام کرنے والے مزدوروں کیلئے کم از کم اجرت کی منظوری دے دی۔خیبر پختونخوا کے چیف سیکرٹری محمد اعظم خان نے صوبہ بھر کے خشت بھٹیوں میں کام کرنے والے مزدوروں کو اجرت کی فراہمی کے سلسلے میں حائل مسائل کا سدباب کرنے کی غرض سے متعلقہ حکام کو ہدایت کی ہے کہ وہ مذکورہ بھٹیوں میں کام کرنے والے مختلف درجات یعنی ہنر یافتہ ،کم ہنر یافتہ اور غیر ہنریافتہ مزدوروں کے لئے کم از کم اجرت کے تعین کی منظوری دیں۔ اس سلسلے میں کم ازکم اجرت کا تعین کرنے کے لئے قائم کردہ مینیمم ویجز بورڈ خیبر پختونخوا نے فوری طور پر اعلامیہ بھی جاری کردیا ہے ۔اعلامیہ کے تحت بھٹیوں میں مختلف نوعیت کے کام کرنے والے مزدوروں جس میں ہیڈ منشی اور اکاؤنٹنٹ کے لئے 16ہزارمنشی،کلرک اور کیشئیر کے لئے 15500روپے،مستری 16000،جالی والا 15400،کوئلہ بان 15200، اینٹیں بنانے والا15300،ٹیوب ویل آپریٹر 15300،ماشکی 15200،ناظر15200اور باورچی کیلئے15000اجرت شامل ہے جبکہ صفائی والے کو ایک ہزار اینٹیں بنانے کے عوض 40روپے ،بھرائی والے کو 43روپے،اینٹیں نکالنے والے کو 128روپے،ریتی کو 23روپے،تپیڑہ قالب کو 750،تپیڑہ سانچہ والے کو800، چوکہ گلدارکو1000روپے اور ریڑی والے کو 238روپے یومیہ دہاڑی دینے کی ہدایت۔مذکورہ مراسلے کے مطابق کسی بھی مزدور سے جنس،رنگ،مذہب و نسل ،صنف ،فرقہ یا سیاسی وابستگی کی امتیاز سے بالا تر اجرت کی فراہمی کی بھی ہدایت کی۔مذکورہ اعلامیہ کا اجراء خیبر پختونخوا فیکٹری ایکٹ 2013ء اوردیگر لیبر قوانین جو عمومی طور پر لاگوہیں کے تحت کیا گیا ہے تاہم اس حوالے سے متعلقہ محکمہ کو بھی ہدایت کی ہے کہ وہ کم از کم اجرت کے نفاذ ،مزدوروں کا یومیہ 8گھنٹے کام اور مہینے میں 26ایام کام کے بارے میں عملی طور پر نفاذ یقینی بنائیں۔مذکورہ صنعت میں کام کرنے والے سینئراورتجربہ کارمزدوروں کوزیادہ مراعات دینے کی بھی ہدایت کی گئی ہے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریںTagged ,
3326