Chitral Times

Jul 15, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

گڈ ٹو سی یو چیف صاحب – میری بات:روہیل اکبر

شیئر کریں:

گڈ ٹو سی یو چیف صاحب – میری بات:روہیل اکبر

پاکستان کے 28 ویں سبکدوش ہونے والے چیف جسٹس آف پاکستان عمر عطا بندیال اپنی مدت ملازمت پوری ہونے کے بعد ریٹائر ہوگئے آپ ایک محب وطن پاکستانی قانون دان ہیں انکا ایک جملہ بڑا مشہور ہوا گڈ ٹو سی یو اور یہی جملہ انہوں نے اپنی کورٹ میں آخری کیس کے دوران کہا بندیال صاحب نے وکالت سے لیکر چیف جسٹس تک بھر پور زندگی گذاری ہنس مکھ اور خوش اخلاق عمر عطا بندیال کے خلاف پی ڈی ایم نے مہم بھی چلائی گئی ان پر تنقید بھی بے شمار ہوئی جلسوں میں انکی تصویریں بھی لگائی گئی لیکن انہوں نے بڑے تحمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے ہر کسی کو گڈ ٹو سی یو ہی کہا اپنے آخری روز بھی چیف جسٹس نے میڈیا کے ساتھیوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ خاص کر اللہ کا شکرگزار ہوں کہ جس نے مجھ سے ملک اور انصاف کے لیے خدمت لی اللہ کے لیے اپنا فریضہ ادا کیااور میڈیا نے مجھے مستعد رکھا میڈیا کی تنقید کو ویلکم کرتا ہوں میڈیا فیصلوں پر تنقید ضرور کرے لیکن ججز پر نا کرے کیونکہ تنقید کے جواب میں ججز اپنا دفاع نہیں کر سکتے اور جج پر تنقید سے پہلے یہ ضرور دیکھیں کہ تنقید سچ پر مبنی ہے یا قیاس آرائیوں پر ججز پر تنقید جھوٹ کی بنیاد پر نہیں ہونی چاہیے۔

 

عمر عطا بندیال 17 ستمبر 1958 میں لاہور میں ایک پنجابی مسلمان گھرانے میں پیدا ہوئے 1973 میں عمر عطا بندیال نے سینٹ میری اکیڈمی راولپنڈی سے اپنا سینئر کیمبرج سرٹیفکیٹ حاصل کیا اس کے بعد انہوں نے ایچی سن کالج لاہور میں اپنے اعلیٰ سینئر کیمبرج سرٹیفکیٹ کے لیے داخلہ لیا جو انہوں نے 1975 میں حاصل کیا اسکے بعد انہوں نے 1979 میں کولمبیا یونیورسٹی سے معاشیات میں بیچلر کی ڈگری حاصل کی اور پھر 1981 میں یونیورسٹی آف کیمبرج سے لاء ٹریپوس کی ڈگری حاصل کی انہوں نے لنکنز ان لندن سے بیرسٹر ایٹ لاء کے طور پربھی کوالیفائی کیا عمر عطا بندیال نے 1983 میں لاہور ہائی کورٹ میں بطور وکیل شمولیت اختیار کی انہوں نے 1987 تک پنجاب یونیورسٹی لاء کالج میں ٹارٹس لاء اور کنٹریکٹ لاء بھی پڑھایا جس کے بعد انہوں نے اس کی گریجویٹ اسٹڈیز کمیٹی میں خدمات انجام دیں اس کے بعد انہیں 4 دسمبر 2004 کو لاہور ہائی کورٹ کا جج بنا دیا گیالاہور ہائی کورٹ کے جج کی حیثیت سے انہوں نے آئینی حقوق، دیوانی اور تجارتی تنازعات اور مفاد عامہ سے متعلق مقدمات کی صدارت کی 1 جون 2012 کو انہیں لاہور ہائی کورٹ کا41 ویں چیف جسٹس مقرر کیا گیا انہوں نے 16 جون 2014 کو سپریم کورٹ کے جج کے طور پر اپنی تقرری تک اس عہدے پر کام کیا بطور چیف جسٹس ان کی تقرری کی منظوری صدر عارف علوی نے 13 جنوری 2022 کو دی جس کے بعد انہوں نے 2 فروری 2022 کو اپنا عہدہ سنبھالا۔

 

عمر عطا بندیال 17 جون 2014 سے سپریم کورٹ آف پاکستان کے جسٹس ہیں سپریم کورٹ میں تقرری سے قبل انہوں نے 1 جون 2012 سے 16 جون 2014 تک لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس کے طور پر خدمات انجام دیں عمر عطا بندیال 2 فروری 2022 سے 16 ستمبر 2023 کو ریٹائر ہونے تک ایک سال6 ماہ اور 25 دن تک چیف جسٹس آف پاکستان کے طور پر کام کرتے رہے عمر عطا بندیال کی بطور چیف جسٹس آف پاکستان (CJP) تقرری کی منظوری صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے 13 جنوری 2022 کو دی تھی یوں انہوں نے 2 فروری 2022 کو ایوان صدر میں ایک تقریب میں حلف اٹھایا اپنے پہلے مہینے میں انہوں نے سپریم کورٹ کے مختلف اداروں بشمول کیس مینجمنٹ سسٹم میں اصلاحات کا آغاز کیا تاکہ فوری انصاف کی فراہمی کو یقینی بنایا جا سکے انہوں نے ان اداروں کو دوبارہ منظم کیا جو انتظامی اور عدالتی اختیارات سے نمٹتے ہیں بشمول بلڈنگ کمیٹی، ریکارڈ انرولمنٹ کمیٹی، سپریم کورٹ ریسرچ افیئرز برانچ، اور لاء کلرک پروگرام انہوں نے قاضی فائز عیسیٰ، سردار طارق مسعود، اعجاز الاحسن، مظہر عالم اور سجاد علی شاہ کو بالترتیب بلوچستان، اسلام آباد، پنجاب، خیبر پختونخوا اور سندھ کی صوبائی انسداد دہشت گردی عدالتوں کے مانیٹرنگ جج مقرر کیاچیف جسٹس کی حیثیت سے جسٹس بندیال سپریم جوڈیشل کونسل، جوڈیشل کمیشن آف پاکستان اور لاء اینڈ جسٹس کمیشن کے چیئرمین منتخب ہوئے ان تینوں اداروں کی ساخت مکمل طور پر تبدیل ہو گئی تھی بطورچیف جسٹس پہلے مہینے ہی انہوں نے سپریم کورٹ التوا کے مسئلے کو حل کرنے کی کوشش میں ریکارڈ 1,761 مقدمات کا فیصلہ کیا 2022 میں ان کا نام ٹائم کے 100 سب سے زیادہ بااثر لوگوں میں شامل تھا

 

ان کے دور میں عدلیہ کے ججز بھی تقسیم نظر آئے ایک وقت آیا کہ جسٹس مندوخیل نے بنچ کے ارکان سے اختلاف کی وجہ سے چیف جسٹس اور بنچ کے دیگر ارکان کے ساتھ بیٹھنے سے انکار کر دیا جسٹس اطہر من اللہ نے سپریم کورٹ کے طرز عمل پر افسوس کا اظہار کیااور اسے سیاسی حکمت عملیوں کو آگے بڑھانے کے مترادف قرار دیا جسٹس اطہر من اللہ جو عدالت عظمیٰ کے ان ججوں میں شامل ہیں جنہوں نے خیبرپختونخوا اور پنجاب میں انتخابات میں تاخیر کے حوالے سے چیف جسٹس پاکستان عمر عطا بندیال کی جانب سے لیے گئے ازخود نوٹس کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ درخواستوں اور ازخود نوٹس کو قبول کرنے سے عدالت دو صوبائی ہائی کورٹس کی آزادی کو بلاجواز طور پر مجروح کرے گی چیف جسٹس آف پاکستان (سی جے پی) عمر عطا بندیال نے سپریم کورٹ میں تقسیم کو ختم کرنے کے لیے اپنے ساتھی ججوں سے رابطہ کیا ہے کیونکہ پنجاب اور خیبرپختونخوا (کے پی) میں انتخابات میں تاخیر کیس پر سپریم کورٹ کے فیصلے سے متعلق تنازعہ تھا 28 مارچ 2023 کو اس وقت کی حکومت نے متفقہ طور پر عدلیہ کے خلاف ایک متنازعہ قرارداد منظور کی.

 

قرارداد وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب نے پیش کی تھی کہ قانون سازی کے عمل میں عدلیہ کی مداخلت کو مسترد کرتے ہیں اور پھر 6 اپریل 2023 کو، قومی اسمبلی نے سپریم کورٹ (SC) کے تین رکنی بینچ کے فیصلے کو مسترد کرنے کے لیے ایک قرارداد منظور کی جس نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ECP) کو ملک میں اسنیپ پولز کرانے کی ہدایت کی تھی پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار پاکستان بار کونسل (پی بی سی) وکلاء کی سب سے بڑی باقاعدہ تنظیم نے جمعہ کو سپریم کورٹ کے جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی کے خلاف سپریم جوڈیشل کونسل (SJC) میں بدتمیزی کی شکایت درج کرائی اور پھرسپریم کورٹ کے دو ججوں جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور جسٹس سردار طارق مسعود نے سپریم جوڈیشل کونسل (SJC) کو خط لکھا ہے جس میں اعلیٰ عدالتی ادارے پر زور دیا ہے کہ وہ اپنے ساتھی کے خلاف مبینہ “بدانتظامی اور مالی بے ضابطگی” کی شکایات پر کارروائی شروع کرے لیکن سپریم جوڈیشل کونسل کا اجلاس چیف جسٹس عمر عطا بندیال نہ بلا سکے اب جسٹس قاضی فائز عیسی صاحب نئے چیف جسٹس آف پاکستان بن چکے ہیں امید ہے وہ پاکستان اور پاکستانیوں کے لیے مفید اور بہتر ثابت ہونگے مجبور اور غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گذارنے والی قوم دونوں چیف صاحبان کو گڈ تو سی یو کہتی ہے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
79190