Chitral Times

Jul 24, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

پنجاب میں جدید کنٹینر ہسپتال کا آغاز – میری بات:روہیل اکبر

Posted on
شیئر کریں:

پنجاب میں جدید کنٹینر ہسپتال کا آغاز – میری بات:روہیل اکبر

ہمارے ہاں صحت سب سے اہم اور پہلا مسئلہ ہے لیکن آج تک اس شعبہ پر کسی نے کوئی خاص توجہ نہیں دی ہمارے بنیادی مراکز صحت(بی ایچ یو)اور رورل ہیلتھ سینٹر(آر ایچ یو)پر کروڑوں روپے لگائے گئے لیکن قبضہ گروپوں نے مقامی سیاستدانوں کے تعاون سے ان ہسپتالوں میں واڑے بنا لیے تو کسی نے وہاں اپنے ڈیرے جمالیے اور رہی سہی کسر ہمارے ڈاکٹروں نے پوری کردی جو دوردراز کے علاقوں میں جانا اپنی توہین سمجھتے ہیں پنجاب میں اس وقت5301بی ایچ یو ہیں اگر ملکی سطح کی بات کی جائے توپاکستان بھر میں 6ہزار بنیادی مراکز صحت اور 5ہزار رورل ہیلتھ سینٹر ہیں جو ہمارے دور دراز کے علاقوں میں غریب لوگوں کو صحت کی سہولیات فراہم کرتے ہیں لیکن بدقسمتی سے بہت سے ہسپتالوں ہمارے حکمرانوں کی وجہ سے بند پڑے ہیں کیونکہ انکی اس شعبہ کی طرف دلچسپی نہیں ہے لیکن اب وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز شریف نے فیلڈ ہسپتال پراجیکٹ کا افتتاح کردیا پہلے مرحلے میں 32سے زائد چھوٹے بڑے فیلڈ ہسپتال فنکشنل کیے گئے جبکہ 21لارج فیلڈ ہسپتال صوبے کے مختلف اضلاع میں علاج معالجے کی معیاری سہولیات فراہم کریں گے ان کنٹرینر ہسپتالوں میں قائم موبائل ہیلتھ یونٹ میں ڈائگناسٹک پلان،ایکسرے روم اورالٹرا ساؤنڈ روم شامل ہیں ہسپتال میں فارمیسی،میڈیکل آفیسر اوروویمن میڈیکل آفیسر کے لیے بھی کمرے بنائے گئے ہیں

 

ان فیلڈ ہسپتالوں میں جنرل اوپی ڈی،حفاظتی ٹیکے،بنیادی تشخیصی ٹیسٹ کی سہولیات شامل ہیں مسلم لیگ ن کی حکومت نے صرف 6ہفتوں کے قلیل عرصے میں صحت کی سہولتیں لوگوں کی دہلیز پر پہنچا دی ہیں اتنے کم عرصے میں فیلڈ ہسپتالوں جیسا بڑا پراجیکٹ فنکشنل کرنا موجودہ حکومت کا واقعی ایک بڑا کارنامہ ہے اور اس منصوبہ کو پروان چڑھانے میں صوبائی وزرا خواجہ سلمان،خواجہ عمران،سیکرٹری صحت علی جان اور راجہ منصور کی دن رات محنت شامل ہے جنہوں نے24،24گھنٹے بھی کام کیا ہے یہ فیلڈ ہسپتال تمام بنیادی سہولتوں کے آراستہ ایک مکمل ہسپتال ہے ان فیلڈ ہسپتالوں میں وہ تمام سہولتیں مہیا کی گئی ہیں جو کسی بھی اچھے کلینک میں ہوتی ہیں اب یہ 32فیلڈ ہسپتال پنجاب کے مختلف علاقوں میں پھیل جائیں گے اور عوام کو صحت جیسی سہولت فراہم کرینگے یہ فیلڈ ہسپتال ان علاقوں کیلئے ہیں جہاں کوئی بڑا ہسپتال یا اچھا کلینک موجود نہیں فیلڈ ہسپتال خاص کردیہی علاقوں میں جاکر لوگوں کو بہترین طبی سہولتیں فراہم کریں گے گاؤں میں اعلان ہوگاکہ اس جگہ فیلڈ ہسپتال پارک ہوگا جہاں سب کا اپنا علاج کیا جائیگا

 

یہ فیلڈ ہسپتال سٹیٹ آف دی آرٹ ہیں فیلڈ ہسپتال میں اے سی، ڈائگناسٹک یونٹ، لیب،الٹرا ساؤنڈ، ای سی جی اورفارمیسی کی سہولت موجود ہوگی فیلڈ ہسپتال میں ایکسرے کی سہولت بھی میسر ہوگی فیلڈ ہسپتال میں او پی ڈی،حفاظتی ٹیکے،فرسٹ ایڈ،لیڈی ہیلتھ ورکر،سکول نیوٹریشن کی سہولت بھی میسر ہوگی ان فیلڈ ہسپتالوں کی براہ راست نگرانی اور مانیٹرنگ بھی کی جائیگی ان فیلڈ ہسپتالوں کے افتتاح کے موقعہ وزیر اعلی پنجاب مریم نواز نے پی ٹی آئی کی سابق حکومت کو بھی آڑھے ہاتھوں لیااور اپنے خطاب میں کہا کہ کنٹینر آج سے پہلے کسی اورچیز کیلئے استعمال ہوتے تھے کنٹینر پر چڑھ کر کے لوگ جلاؤ، گھیراؤ،مارواورماردوکی تلقین کرتے رہے ہم لوگ خدمت کیلئے حکومت میں آئے ہیں تو کنٹینر ہسپتال بن گئے ہیں کنٹینر کا غلط استعمال کرنے والوں نے کینسر کے مریضوں کی مفت ادویات بند کردی تھیں اوروہ سڑکوں پر آگئے تھے لیکن ہم نے سب سے پہلے حکومت میں آتے ہی کینسر کے مریضوں کی ادویات دوبارہ شروع کردی ہے ادویات کیلئے فنڈبھی دو ا رب سے 6 ارب بڑھا دیاگیا ہے

 

پنجاب کے 2500بیسک ہیلتھ یونٹ کی ری ویمپنگ بھی کی جاری ہے جن میں سے کچھ مکمل کرلئے گئے ہیں اب پنجاب کے کسی بھی بی ایچ یو یا آر ایچ سی میں ڈاکٹر کی کمی کی وجہ سے مریض پریشان نہیں ہوں گے ڈاکٹر ز کی کمی پوری کرنے کیلئے بھی جا مع پلان مرتب کررہے ہیں ہماری حکومت غریبوں کی صحت کیلئے کوئی کمپرومائز نہیں کریگی اسکے ساتھ ساتھ ہم پاکستان کی پہلی ایئر ایمبولینس بھی شروع کرنے جارہے ہیں جسکی ٹریننگ شروع ہوچکی ہے ائیرایمبولینس پہ بہت سے لوگوں نے اعتراض کیا جیسے نوازشریف نے موٹر وے بنائی تو لوگوں نے طرح طرح کی باتیں کی لیکن استعمال سب کرتے ہیں جبکہ ائیر ایمبولینس صرف اورصرف غریب شہریوں کیلئے ہے کیونکہ ایئر ایمبولینس نہ ہونے کی وجہ سے ہارٹ اٹیک کے مریض ہسپتال پہنچنے سے پہلے ہی وفات پاجاتے ہیں پانچ سال کے اندر پنجاب کے ہر ضلع میں سٹیٹ آف دی آر ٹ ہسپتال بنا کرجاؤں گی ان ہسپتالوں میں کارڈیالوجی اورکینسر کا یونٹ بھی ہوگا صحت کی سہولیات ہماری پہلی تریجیح ہے

 

یہی وجہ ہے کہ ہم لاہورمیں پہلا میڈیکل سٹی بنا رہے ہیں میں نے جب دورہ سرگودھا کیاتو حیرت ہوئی کہ ایک بڑے شہر میں ایک بھی کیتھ لیب نہیں اب ہم ہر شہر میں ایک ایک جدید کیتھ لیب دیں گے جبکہ سرگودھا میں کارڈیالوجی انسٹی ٹیوٹ 12ماہ میں فنکشنل ہوجائے گا۔میں سمجھتا ہوں کہ پنجاب حکومت کا صحت کے حوالہ سے یہ ایک اچھا اقدام ہے اور صحت جیسی سہولت عوام کا بنیادی مسئلہ ہے آج بھی اگر ہم کسی سرکاری ہسپتال میں جائیں تو وہاں مریضون کی ایک لمبی لائن لگی ہوتی ہے جہاں ٹیستوں کے لیے اکثر دوسرے دن کا وقت دیا جاتا ہے حکومت ان ہسپتالوں کی حالت بہتر بنانے پر بھی توجہ دے خواجہ سلمان رفیق اور خواجہ عمران نذیر عواملوگ ہونے کے ساتھ ساتھ عوام کے مسائل کو بھی سمجھتے ہیں اس لیے حکومت انہیں پورے اختیارات کے ساتھ میدان میں اتارے تاکہ آنے والوں دنوں میں عوام کا دکھ اور درد کم ہوسکے اس موقعہ پر میں نشتر ہسپتال میں عوام کہ سہولیات کا تذکرہ ضرور کرنا چاہونگا کہ وہاں پر جب سے ڈاکٹر کاظم آئے ہیں عوام کی تکالیف کم ہونا شروع ہو چکی ہیں خاص کر کینسر وارڈ کے مریضوں کی دیکھ بھال کا کام بھی بہتر ہورہا۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
88216