Chitral Times

Jul 15, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

نادہندگان کے فون بلاک کرنے کا فیصلہ، بعد ازاں قومی شناختی کارڈ بلاکنگ ہوسکتا ہے۔ وفاقی حکومت

Posted on
شیئر کریں:

نادہندگان کے فون بلاک کرنے کا فیصلہ، بعد ازاں قومی شناختی کارڈ بلاکنگ ہوسکتا ہے۔ وفاقی حکومت

اسلام آباد( چترال ٹائمز رپورٹ) وفاقی حکومت نے ڈیفالٹرز کے فون بلاک کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔نگران وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر عمر سیف کا کہنا ہے کہ نادہندگان کیلئے اس سے اگلا قدم سم اور بعد ازاں قومی شناختی کارڈ بلاکنگ ہوسکتا ہے۔اس حوالے سے نگران وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر عمر سیف کی زیر صدارت اعلیٰ سطح کا اجلاس منعقد ہوا۔اجلاس میں پی ٹی اے، سیلولر آپریٹرز، جی ایس ایم اے شریک ہوئے۔ نگران وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی نے پی ٹی اے کیلئے پالیسی ڈائریکٹیو جاری کرنے کی ہدایت کردی.شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے نگران وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر عمر سیف نے عام لوگوں تک اسمارٹ فونز پہنچانے کیلئے اہم اقدام اٹھاتے ہوئے کہا کہ ڈیجیٹل ورلڈ سے خود کو منسلک کرنے،ای کامرس کے فروغ کیلئے اسمارٹ فونز فار آل پالیسی ضروری ہے عوام کو سہولیات کی فراہمی اولین ترجیح ہے۔انہوں نے کہا کہ ڈیفالٹرز کے فون بلاک کیئے جائیں گے، نادہندگان کیلئے اس سے اگلا قدم سم اور بعد ازاں قومی شناختی کارڈ بلاکنگ ہوسکتا ہے۔ اس اقدام سے نادہنگان کی حوصلہ شکنی اوراسمارٹ فونز کے استعمال کا تناسب بڑھے گا۔انہوں نے مزید کہا کہ افریقی ملک روانڈا کے اعلیٰ سطح وفد سے ملاقات میں بھی اسمارٹ فونز ایکسپورٹ کرنے سے متعلق اہم پیشرفت ہوئی پاکستانی اسمارٹ فونز میں روانڈا حکومت نیخصوصی دلچسپی ظاہر کی ہے۔

 

رائٹ ٹو پبلک سروسز کمیشن میں چار عوامی شکایات کی شنوائی

 لوئر چترال سے محمد واجد نامی شہری کا عوامی راستے کی ملکیت کے متعلق کمیشن سے رجوع
بنیادی خدمات تک بروقت رسائی عوام کا قانونی حق ہے, سرکاری اہلکار فراہمی کے پابند ہیں, چیف کمشنر

پشاور ( چترال ٹائمزرپورٹ)رائٹ ٹو پبلک سروسز کمیشن میں چار شہریوں کی شکایت کی شنوائی ہوئی. تین رکنی بنچ نے شہریوں کی شکایات سنیں۔ پشاور سے تعلق رکھنے والے طالب علم شاہ سوار نے کمیشن کو درخواست دی تھی کہ بورڈ بازار میں انکی جیب سے کسی نے موبائل فون نکالا ہے۔ پولیس نے روازنامچے میں اندراج کر لیا ہے لیکن ایف آئی آر کے اندراج سے انکاری ہے۔ کمیشن نے بطور پہلی اپیل شہری کی درخواست کو سی سی پی او پشاور کو بھجوا دیا وہ مہینے کے اندر شکایت کا ازالہ کرنے کا پابند ہے. لوئر چترال سے محمد واجد نامی شہری نے عوامی راستے کی ملکیت کے متعلق کمیشن سے رجوع کیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ انکے والد نے عوامی استعمال کیلئے راستہ وقفکیا تھا۔اب ایک اور شخص نے راستے کی کھتونی کی نقل حاصل کر لی اور باقی لوگوں کو دھمکا رہا ہے کہ وہ راستہ اسکی ملکیت ہے۔ کمیشن نے سیٹلمنٹ آفیسر کو اگلی تاریخ پرریکارڈ سمیت طلب کر لیا۔ ایبٹ آباد سے سلطان محمد نے میڈیکو لیگل رپورٹ کے حصول کیلئے کمیشن سے رابطہ کیا تھا۔ انہوں نے کمیشن کا شکریہ ادا کیا کہ مقررہ تاریخ سے قبل ہی ان کی شنوائی ہوگئی ہے۔ کرم سے عبدل وارث نے ایف آئی آر کے اندراج کیلئے کمیشن کو درخواست دی تھی۔ امن و امان کی صورتحال کے باعث وہ کمیشن کے سامنے حاضر نہیں ہو سکے. کمیشن نے انکی سنوائی کو اگلی سماعت تک ملتوی کر دیا۔کمیشن نے اپنے اعلامیہ میں کہا ہے کہ خدمات تک بروقت رسائی ہر شہری کا بنیادی حق ہے. نوٹیفایڈ خدمات تک بروقت رسائی میں کسی بھی سرکاری اہلکارکی کوتاہی قانون کے تحت قابل تعزیرجرم ہے۔ بنیادی خدمات کے حصول کیلئے شہری کمیشن سے رجوع کریں۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریںTagged
81201