Chitral Times

Jul 17, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

مودی کے متنازع بیانا ت کے بھارتی سیاست پر اثرات –  تحریر : قادر خان یوسف زئی

شیئر کریں:

مودی کے متنازع بیانا ت کے بھارتی سیاست پر اثرات –  تحریر : قادر خان یوسف زئی

بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی نے راجستھان میں ایک حالیہ تقریر کے دوران مسلمانوں کو نشانہ بناتے ہوئے تفرقہ انگیز اور بدنیتی پر مبنی تبصرے کئے۔ ایک انتخابی ریلی کے دوران کی گئی تقریر میں کہا گیا کہ اگر کانگریس پارٹی اقتدار سنبھالتی ہے تو وہ مبینہ طور پر مسلمانوں میں دولت کو دوبارہ تقسیم کرے گی۔ اس بیان کو کانگریس پارٹی اور کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا۔ مارکسسٹ ( سی پی آئی۔ ایم) نے تفرقہ انگیز اور بدنیتی پر مبنی قرار دیتے ہوئے اس کی شدید مذمت کی ہے اور انہوں نے الیکشن کمیشن سے پی ایم مودی کے ریمارکس کے خلاف کارروائی کرنے کی بھی اپیل کی۔

نریندر مودی کی جانب سے مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز مہم انتہا کو چھو رہی ہے اور ان کی نفرت انگیز تقریروں سے مسلمانوں سمیت دیگر مذہبی اقلیتوں کو شدید خطرات لاحق ہیں ۔ اپوزیشن جماعتوں نے مودی کی تقریر کو آڑے ہاتھوں لیا ہوا ہے، جن میں فرقہ وارانہ جذبات اور نفرت کو ہوا دینے کی صلاحیت کے لیے تنقید کی گئی ہے۔ خاص طور پر کانگریس پارٹی نے ان ریمارکس کو انتخابی اصولوں کی خلاف ورزی قرار دیا ہے جس میں امیدواروں کو مذہبی کشیدگی بھڑکانے سے منع کیا گیا ہے۔نریندر مودی کے تبصروں کے ارد گرد تنازع نے جاری انتخابات کے دوران کشیدگی کو تیز کر دیا ہے، جہاں بھارتیہ جنتا پارٹی ( بی جے پی) پارلیمنٹ کے ایوان زیریں لوک سبھا میں اپنی اکثریت کا دفاع کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ مسلم اقلیت، جو کہ بھارت کی 1.4بلین آبادی کا تقریباً 20فیصد پر مشتمل ہے، نے طویل عرصے سے مودی کی قیادت میں امتیازی سلوک پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ مودی کے تبصروں اور ان کے مطلوبہ معنی کے ارد گرد ہونے والی بحث نے عدم تحفظ کے خدشات کو مزید ہوا دی ہے۔ تنقید کے باوجود، زیادہ تر پولز کے مطابق، بی جے پی اور مودی کی جاری عام انتخابات میں جیت کی توقع ہے۔ تاہم، مودی کے تبصروں کے ارد گرد کے تنازع نے مذہبی ہم آہنگی کو فروغ دینے اور تمام شہریوں کے حقوق کا احترام کرنے کے پارٹی کی فرقہ وارنہ نفرت انگیز پالیسی پر سوالات اٹھائے ہیں، چاہے ان کے مذہبی عقائد کچھ بھی ہوں۔ مودی کی تقریر کے خلاف شکایات کا الیکشن کمیشن کا امتحان انتخابی قواعد کو برقرار رکھنے اور منصفانہ اور جامع انتخابی عمل کو یقینی بنانے کی کارروائی بھی رسمی ہی ثابت ہوگی۔

 

راجستھان اور علی گڑھ میں انتخابی ریلیوں کے دوران وزیر اعظم نریندر مودی کے حالیہ بیانات نے تنازع اور نفرت انگیز تقریر کے الزامات کی آگ بھڑکا دی ہے۔ مودی کے ریمارکس، جہاں انہوں نے مسلمانوں کو ‘درانداز کے طور پر پیش کیا اور اس بات پر زور دیا کہ کانگریس پارٹی مسلمانوں میں دولت کو دوبارہ تقسیم کرے گی، وسیع پیمانے پر تفرقہ انگیز اور اشتعال انگیزی کے طور پر مذمت کی گئی ہے۔ نفرت انگیز تقاریر کے الزامات اور پولرائزیشن کی کوششوں نے سیاسی رہنمائوں کے اخلاقی طرز عمل اور انتخابی عمل پر اس طرح کی بیان بازی کے اثرات کے بارے میں سنگین خدشات کو جنم دیا ہے۔ مودی کے بیانات، جن میں تفرقہ انگیز زبان اور مسلمانوں کے تئیں کانگریس پارٹی کے ارادوں کے بارے میں جھوٹے دعوے ہیں، کو ووٹروں کو متاثر کرنے کے لیے پولرائزیشن کی دانستہ کوشش کے طور پر دیکھا جارہا ہے۔ مسلم مخالف جذبات کو جنم دے کر اور دولت کی تقسیم اور فرقہ وارانہ ترجیحات کے بارے میں غلط معلومات پھیلا کر، مودی کے ریمارکس کو نفرت اور فرقہ وارانہ فساد کو فروغ دینے کے لیے تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ ایسی اشتعال انگیز بیان بازی کا استعمال نہ صرف منصفانہ انتخابات کے اصولوں کو نقصان پہنچاتا ہے بلکہ ہندو توا کے نظریات کو معاشرے کے اندر موجودہ تنائو کو بھی بڑھاتا ہے۔

 

مودی کے خلاف نفرت انگیز تقریر کے الزامات اخلاقی حدود کی خلاف ورزی کو اجاگر کرتے ہیں اور ایک سیاسی رہنما، خاص طور پر وزیر اعظم سے توقع نہیں کی جاتی کہ وہ اس قدر غیر ذمے دارانہ بیانات دیں تاہم، مودی کے جھوٹ پھیلانے اور انتخابی فائدے کے لیے ووٹروں کو پولرائز کرنے کی کوشش، سیاسی فائدے کے لیے فرقہ وارانہ جذبات کو استعمال کرنے کے رجحان کی عکاسی کرتے ہیں۔ مودی کے بیانات سے متعلق تنازع، بھارت میں سیکولر روایات کے خاتمے اور اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ کے بارے میں وسیع تر خدشات کو ظاہر کرتا ہے۔ مسلمانوں کو نشانہ بنانا، مسلم مخالف بیانیے کا پرچار، اور مودی کی قیادت میں اقلیتوں کے خلاف تشدد اور امتیازی سلوک کی تاریخ، شمولیت اور مذہبی ہم آہنگی کے لیے حکومت کے عزم پر سنگین سوالات اٹھاتی ہے۔ اقلیتوں کے خلاف حملوں میں اضافہ اور فرقہ وارانہ کشیدگی کا تسلسل سماجی تانے بانے اور سیاسی گفتگو کا از سر نو جائزہ لینے کا مطالبہ کرتا ہے۔

 

مودی اور ان کے حواری خوف اور نفرت کا استعمال کرتے ہوئے ووٹ حاصل کرنے کے لیے لوگوں کے فطری رجحانات کا فائدہ اٹھانے کے لئے نفرت کو ہوا دیتے آئے ہیں۔ وہ ’’ ہم بمقابلہ ان‘‘ کا بیانیہ بنا کر خوفوں کو جوڑتے ہیں جہاں انہیں مخصوص مفادات حاصل ہوتے ہیں۔ یہ بیان بازی اکثر حقیقی مسائل سے توجہ ہٹانے اور سماجی مسائل کے لیے مذہبی اقلیتوں بالخصوص مسلم کمیونٹی کو قربانی کا بکرا بنانے کے لیے استعمال کی جاتی ہے۔ بی جے پی خارجی پالیسیوں کو فروغ دینے کے لیے بھی خوف کا استعمال کرتے ہیں، یہ حربے خوف اور نفرت کو بھڑکانے کے لیے استعمال کیے جاتے ہیں، اور عجلت اور بحران کا احساس پیدا کرنے کے لیے جو انتہائی اقدامات کا جواز پیش کرتے ہیں۔ سیاست میں خوف اور نفرت کا استعمال کوئی نیا رجحان نہیں ہے، لیکن حالیہ برسوں میں اس نے عالمی سطح پر اہمیت اختیار کر لی ہے، قربانی کا بکرا، اور لوگوں کے تمام گروہوں کو غیر انسانی بناتا ہے۔ یہ بیان بازی پالیسی اور عمل پر وسیع اثر ڈال رہی ہے، اور انسانی حقوق کے خلاف عالمی دبا کو ہوا دے رہی ہے۔

 

سیاسی رہنمائوں کی اخلاقی ذمہ داری ہے کہ وہ نفرت انگیز تقریر اور عدم برداشت کا مقابلہ کریں، اور معاشرے کے ایسے ماڈل کو فروغ دیں جو تنوع کو اپنائے اور انسانی وقار کا احترام کرے۔ یہ خود ضابطے کے ذریعے حاصل کیا جا سکتا ہے، خاص طور پر سیاسی تحریکوں اور جماعتوں کے ذریعے، اور سول، انتظامی، اور فوجداری قانون سازی کے ذریعے۔ حکام اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے کھلاڑیوں کے درمیان تعاون آن لائن نفرت انگیز تقریر کا مقابلہ کرنے میں بھی مدد کرتا ہے۔ مودی کی فطری سیاست ہی نفرت کی بنیاد پر رکھی گئی ، یہ روایت چاہے بھارت کے مسلمانوں کے خلاف ہو یا پاکستان پر ہرزہ سرائی کرنا ، ان کا وتیرہ بن چکا ہے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
88179