Chitral Times

Jul 20, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

ملاکنڈ ڈویژن میں ٹیکس کے نفاذ کے خلاف جماعت اسلامی چترال لوئر کی جانب سے “جرگے” کا اہتمام، سہولیات کے بغیر ٹیکس  کا نفاذ ایک ظالمانہ اقدام ہے،کسی صورت قبول نہیں، مشترکہ قرار داد

Posted on
شیئر کریں:

ملاکنڈ ڈویژن میں ٹیکس کے نفاذ کے خلاف جماعت اسلامی چترال لوئر کی جانب سے “جرگے” کا اہتمام، سہولیات کے بغیر ٹیکس  کا نفاذ ایک ظالمانہ اقدام ہے،کسی صورت قبول نہیں، مشترکہ قرار داد

چترال(نمائندہ چترال ٹائمز )ملاکنڈ ڈویژن میں ٹیکس کے نفاذ کے خلاف جماعت اسلامی چترال لوئر کی جانب سے “جرگے” کا اہتمام کیا گیا ،جس میں آل پارٹیز اور سول سوسائٹی کے نمائندگان کی شرکت کی اور موضوع سے متعلق اپنے اپنے خیالات کااظہارکیا۔ ملاکنڈ ڈویژن میں ٹیکس کے نفاذ سے متعلق کافی غورخوص اور بحث مباحثے کے بعد درجہ ذیل نکات پر مشتمل اعلامیہ جاری کرنے کا فیصلہ ہوا۔

چترال میں لینڈ سٹلمنٹ کے نظام کا نفاذظالمانہ اور غیر منصفانہ اقدام ہے، جس کو مسترد کرتے ہوئے یہ مطالبہ کیا جاتا ہے کہ چترال کی ہر نوع کی اراضی کوئی شاملات یا چراگاہ کا حصہ نہیں بلکہ اہل چترال کی مشترکہ ملکیت ہے ۔ اس طریقے پر چترالیوں کی زمینوں پر قبضہ کرنے اور جنگلات کو سرکاری اثاثہ قرار دینے کے عمل کو ہم کلی طور پر مسترد کرتے ہیں ۔

گزشتہ چند برسوں سے چترال میں معدنیات پر غیر مقامی لوگوں کی طرف سے کام بڑی تیزی سے جاری ہے، جس کی وجہ سے چترال کی مقامی آبادی میں سخت تشویش پائی جاتی ہے، چترال کے وسائل پر پہلا حق اہل چترال کا ہے۔ لہٰذا ہمارامطالبہ ہے کہ مائننگ کرتے ہوئے چترال اور اہل چترال کے حقوق کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے۔

 

سہولیات کے بغیر ٹیکس کے نظام کا نفاذ ایک ظالمانہ اقدام ہے، ہمارا مطالبہ ہے کہ پہلے ہمیں دیگر اضلاع اور بڑے شہروں کے مساوی سہولیات دینے کے بعد پھر ٹیکس لاگو کیا جائے۔ سہولیات اور حقوق کی بجاآوری کے بغیر کسی ٹیکس کے نفاذ کو ہم مسترد کرتے ہیں ۔
فیصلہ ہواکہ اس سلسلے میں تمام تر سیاسی و دیگر وابستگیوں سے بالاتر ہو کر مشترکہ تحریک شروع کرد ی جائے گی اور عوامی بیداری کے لیے گرینڈ راؤنڈ ٹیبل کا اہتمام کیا جائے گا۔

chitraltimes all parties meeting on tax implemantation in malakand division ji office chitraltimes all parties meeting on tax implemantation in malakand division


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, چترال خبریں
89729