Chitral Times

Jul 17, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

عمران خان کا چیف جسٹس کو خط، پی ٹی آئی کو انصاف دینے کا مطالبہ

Posted on
شیئر کریں:

عمران خان کا چیف جسٹس کو خط، پی ٹی آئی کو انصاف دینے کا مطالبہ

اسلام آباد(چترال ٹائمزرپورٹ)بانی چیئرمین پی ٹی آئی نے چیف جسٹس سپریم کورٹ کے نام خط لکھ دیا جس میں تحریک انصاف کے کارکنوں پر ریاستی ظلم کی نشاندہی اور انصاف کی فراہمی کا مطالبہ کیا ہے۔پی ٹی آئی نے خط میڈیا کو جاری کردیا جو کہ چار صفحات پر مشتمل ہے۔ خط جاری کرنے کے حوالے سے پی ٹی آئی کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات رؤف حسن نے پریس کانفرنس کی اور کہا کہ بانی چیئرمین کے کہنے پر چیف جسٹس آف پاکستان کو عمران خان کی جانب سے خط لکھا ہے، ایک گھنٹہ پہلے یہ خط چیف جسٹس کے آفس کو مل گیا ہے، جو کچھ ظلم ہمارے ساتھیوں پر ہورہا ہے اس کی ذمہ داری چیف جسٹس پر عائد ہوتی ہے نہ چیف جسٹس نے خود انصاف کیا اور نہ ماتحت عدالتوں سے انصاف دلایا۔انہوں ں ے کہا کہ معاملہ بہت گمبھیر ہوگیا ہے، پچھلے بہت دنوں سے بائی الیکشن کے اعلان کے بعد ہمارے تمام ورکرز پر چھاپے مارے جا رہے ہیں، ورکرز کی فیملیز کے ساتھ بد سلوکی معمول بن گیا ہے، طاقتور لوگوں کے پرانے ایجنڈے کے ظلم کو آگے لے جایا جا رہا ہے، ان کی کوشش ہے بائی الیکشن کو آر ریلیونٹ کیا جائے، مختلف آر اوز سے خالی کاغذات پر دستخط کروائے جا رہے ہیں، نہ ماننے والے آر اوز کو پکڑ کر ٹارچر کیا جا رہا ہے۔

 

رؤف حسن نے کہا کہ قابض لوگ ہر طریقے سے پی ٹی آئی کو نشانہ بنا رہے ہیں، یہ ہمارے ساتھ جو بھی کریں اس سے حوصلے پست نہیں ہوں گے، آٹھ فروری کو بھی انٹرنیٹ معطل کیا گیا اور اب پھر انٹرنیٹ سروسز بند کرنے کی نوید سنا دی گئی ہے، صنم جاوید اور عالیہ کو دوبارہ سے گرفتار کر کے سرگودھا شفٹ کر دیا گیا ہے، ہمارے تمام قیدیوں کو برے طریقے سے نشانہ بنایا جا رہا ہے، ہماری اطلاعات کے مطابق پندرہ دنوں کے جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کیا گیا ہے، ایک سال سے یہ بچیاں ریاست کے ظلم کو نشانہ بنتی جارہی ہے ہم سمجھتے تھے جنرل ضیاء کے مارشل لاء سے برا دور نہیں آ سکتا لیکن موجودہ صورت حال میں اس دور کو بھی پیچھے چھوڑ دیا گیا ہے ہمارا مطالبہ ہے کہ ہمارے قیدیوں کو ریاست کے جبر سے آزاد کیا جائے۔رؤف حسن نے کہا کہ گزشتہ کچھ وقت سے جو جوڈیشری کے حالات ہیں خط میں وہ لکھا گیا ہے چیف جسٹس قانون کی دھجیاں اڑانے اور ماتحت عدلیہ کا بھی نظام نہیں برقرار رکھ سکے، توشہ خانہ کے ریفرنس اور دیگر کیسز کا بھی خط میں لکھا گیا ہے، نیب کے پاس شریف برادران کے توشہ خانہ کیس کی کوئی ثبوت موجود نہیں ہیں، جب کہ نیب کیسز اوپن اینڈ شٹ کیس تھے، نیب پر ریٹائرڈ جنرل کو لگا دیا گیا ہے جس سے نیب کی ساکھ مزید متاثر ہوئی ہے۔رؤف حسن نے کہا کہ بہاولنگر سانحہ سے بھی ثابت ہوا جس کے پاس طاقت ہے وہی قانون ہے، اس سانحہ میں پولیس کے ادارے کی کیا حالت ہوئی، یہاں قانون طاقتور کے ہاتھ میں ہے، جو طاقتور نہیں وہ انصاف کا تقاضا نہیں کر سکتا، ہم نے خط میں مزید لاقانونیت اور حالات کا تزکرہ بھی کیا ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ کو خط لکھا گیا کہ چھ ججز سے بات کی جائے، چیف جسٹس آف پاکستان نے چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ سے بات کرنے کی اجازت دی،جو خود چور ہے وہ کیوں اس معاملے کو حل کرے گا، وہ تو اس سارے معاملے کا بینیفیشری ہے اور تحفظ دے گا۔رؤف حسن نے کہا کہ خط میں چوتھا پوائنٹ یہ ہے کہ نو مئی کو پکڑے جانے والے لوگ بے گناہ ہیں، ایک خاتون عائشہ ہے جس پر چار قسم کے مقدمات درج کیے گئے ہیں جو سیکڑوں میل دور ہیں، ملٹری کورٹ میں ٹرائل پی ٹی آئی کے لوگوں کو سزا دینا ہے، باقی تمام حقیقی کچے اور پکے کے چوروں کو ریاست کا تحفظ حاصل ہے۔انہوں ں ے بتایا کہ پانچویں پوائنٹ میں ہم نے چیف جسٹس سے استدعا کی ہے کہ چیف کمشنر راولپنڈی کو آپ کی عدالت میں پیش کیا جائے، اس کو چھپا کر من مرضی کے بیان دلوائے جا رہے ہیں اسی طرح نمبر چھ پر کہا گیا ہے کہ ہماری درجنوں پٹیشنز اسلام آباد ہائیکورٹ میں پینڈنگ ہیں ان پٹیشنز کو فکس نہیں کیا جا رہا ہے، آئین پاکستان میں کسیز کی سنوائی نہ کرنا انصاف کی فراہمی کو روکنا ہے، ہمارے مطابق چیف جسٹس اس جرم کے مرتکب ہو رہے ہیں۔رہنما پی ٹی آئی نے کہا کہ ساتویں پوائنٹ میں ہماری ریزرو سیٹس چھین کر باقی جماعتوں کو بانٹی گئی ہیں، کبھی ہماری ری کاؤنٹگ میں ہماری سیٹس چھین لی جاتی ہیں، صرف فسطائیت اور فرد واحد کی تسکین کو پروان چڑھایا جا رہا ہے، آخری پیراگراف میں چیف جسٹس کو یاد دہانی کروائی کہ وہ اپنے ریفرنس میں عدالت میں کھڑے آئین پاکستان کی کتاب پکڑی تھی،چیف جسٹس نے اس وقت کہا تھا کہ میں آئین پاکستان کو مانتا اور عمل کرتا ہوں لیکن چیف جسٹس آف پاکستان نے خود اس آئین کی دھجیاں اڑا دی ہیں، ہمارا تقاضا ہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان کو اپنی گدی چھوڑ دینی چاہیے وہ یا تو آئین پاکستان کو صحیح طریقہ سے عمل درآمد کروائیں یا پھر چوروں اور لٹیروں کو تحفظ فراہم نہ کریں اور کرسی سے اتر جائیں۔

 

 

 

 

پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں 149 ویں پی ایم اے لانگ کورس،14 ویں مجاہد کورس،68 ویں انٹیگریٹڈ کورس اور 23 ویں لیڈی کیڈٹ کورس کی پاسنگ آؤٹ پریڈ کا انعقاد

راولپنڈی(سی ایم لنکس)149 ویں پی ایم اے لانگ کورس،14 ویں مجاہد کورس،68 ویں انٹیگریٹڈ کورس اور 23 ویں لیڈی کیڈٹ کورس کی پاسنگ آؤٹ پریڈ ہفتہ کو پاکستان ملٹری اکیڈمی کاکول میں منعقد ہوئی۔پاس آؤٹ ہونے والے کیڈٹس میں دوست ممالک کے 49 کیڈٹس بھی شامل تھے۔آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق چیئرمین جوائنٹس چیف آف سٹاف کمیٹی جنرل ساحر شمشاد مرزا پاسنگ آؤٹ پریڈ کے مہمان خصوصی جبکہ چیف آف ٹرکش جنرل سٹاف جنرل متین گوراک مہمان اعزاز تھے۔چئیرمین جوائنٹس چیف آف سٹاف کمیٹی نے پریڈ کا معائنہ اور اپنے خطاب میں پاس آؤٹ ہونے والے کیڈٹس کو مبارکباد پیش کی۔چیئرمین جوائنٹس چیف آف سٹاف کمیٹی اور ترکش چیف آف جنرل سٹاف نے کیڈٹس کو ایوارڈزسے نوازا۔اعزازی شمشیر سینئر انڈر آفیسر محمد نعمان عبداللہ اور پریذیڈنٹ گولڈ میڈل کمپنی سینئر انڈر آفیسر محمد عبداللہ جاوید (149پی ایم اے لانگ کورس)کو عطاکیا۔چئیرمین جوائنٹس چیف آف سٹاف کمیٹی اوورسیز گولڈ میڈل دوست ملک سعودی عرب کے سینئر انڈر آفیسر فہد بن عاقل التوارقی الفلاج کو دیاگیا۔

 

چیف آف آرمی سٹاف کورس کین 14 ویں مجاہد کورس کے کورس جونیئر انڈر آفیسر الیاس خان کو دیاگیا۔کمانڈنٹ کینز 68 انٹیگریٹڈ کورس کے دانش ستار اور 23 ویں لیڈی کیڈٹ کورس کی کورس انڈر آفیسر شیر بانو کودیاگیا۔چیئرمین جوائنٹس چیف آف سٹاف کمیٹی نے پاس آؤٹ ہونے والے کیڈٹس اور ان کے والدین کو پی ایم اے کی ٹریننگ مکمل کرنے پر مبارکباد دیتے ہوئے کہاکہ پاکستان آرمی میں شمولیت اختیار کرنے والوں کے لئے پی ایم اے ایک شاندار اور قائدانہ کردار کا حامل ادارہ ہے۔پی ایم اے نے کئی سالوں سے بڑی تعداد میں فارن کیڈٹس کو بھی ٹریننگ کی سہولیات فراہم کی ہیں۔ جن کی اپنی اپنی افواج میں شاندار کارکردگی پی ایم اے کی پیشہ وارانہ صلاحیتوں کا مظہر ہے۔انہوں نے کہا کہ آج کی یہ پریڈ نظم و ضبط کی ایک بہترین مثال اور پاک فوج اور اکیڈمی کی صلاحیتوں کی بہترین عکاسی کرتی ہے۔قبل ازیں اکیڈمی آمد پر چئیرمین جوائنٹس چیف آف سٹاف کمیٹی کا کمانڈنٹ پی ایم نے استقبال کیا۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریںTagged
87713