Chitral Times

Jul 23, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

آشوب چشم اور فضائی آلودگی – میری بات:روہیل اکبر

Posted on
شیئر کریں:

آشوب چشم اور فضائی آلودگی – میری بات:روہیل اکبر

ملک میں اس وقت ڈینگی تو پھیل ہی رہا ہے ساتھ میں آشوب چشم کی بیماری بھی بہت پھیل چکی ہے اور رہی سہی کسر سموگ اور فضائی آلودگی نے پوری کردی ہے فضائی آلودگی سے مراد ہوا میں مختلف زہریلے گیسی یا دیگر ذرات کا اخراج یا موجودگی ہے ان ذرات کااخراج انسانی صحت اور مجموعی طور پر کرہ ارض کے لئے نقصان دہ ہے فضائی آلودگی سے ہونے والے طویل مدتی صحت کے اثرات میں دل کی بیماری، پھیپھڑوں کے کینسر اور سانس کی بیماریاں جیسی وبائی امراض شامل ہیں فضائی آلودگی لوگوں کے اعصاب، دماغ، گردوں، جگر اور دیگر اعضا کو طویل مدتی نقصان بھی پہنچا سکتی ہے۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کے مطابق، ہر سال فضائی آلودگی کی وجہ سے دنیا بھر میں لگ بھگ 70 لاکھ اموات ہوتی ہیں دس میں سے نو انسان ایسی آلودہ ہوا میں سانس لیتے ہیں جو ڈبلیو ایچ او کے رہنما اصولوں کی حد سے تجاوز ہوتی ہے فضائی آلودگی کو کسی بھی ذرائع کے تمام تباہ کن اثرات سے تعبیر کیا جاتا ہے جو ماحول کی آلودگی یا ماحولیاتی نظام کے خراب ہونے میں معاون ہوتا ہے

 

فضائی آلودگی انسانی مداخلت اور قدرتی مظاہر دونوں کی وجہ سے ہے فضائی آلودگی نہ صرف آب و ہوا کی تبدیلی میں اہم کردار ادا کرتی ہے بلکہ زہریلی گیسوں کی وجہ سے یہ اور بھی بڑھ جاتی ہے ماحولیات کے ماہرین کا کہنا ہے کہ کاربن ڈائی آکسائیڈ اور میتھین کی شکل میں ہوا کی آلودگی زمین کے درجہ حرارت میں اضافہ کرتی ہے دنیا کی91فیصد آبادی ایسے مقامات پر رہتی ہے جہاں کا فضائی معیار عالمی ادارہ صحت کے بیان کردہ اصولوں کے مطابق بہت خراب ہے ایک نئی تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ طویل عرصے تک فضائی آلودگی سے متاثر رہنے کی صورت میں لوگوں کی ذہنی صلاحیتوں پر بھی فرق پڑ سکتا ہے منفی اثرات عمر کے ساتھ ساتھ بڑھتے ہیں اور سب سے زیادہ وہ افراد اس سے متاثر ہوتے ہیں جو کم تعلیم یافتہ ہیں پنجاب کے بھٹہ خشت میں زگ زیگ ٹیکنالوجی کے استعمال سے اب اینٹوں کے بھٹوں کی چمنیوں سے دھوئیں کے مرغولے نہیں نکلتے اینٹی سموگ سکواڈز لاہور کے صنعتی علاقوں میں دن رات گشت کر کے دھواں پھیلانے والے کارخانوں کے خلاف ایکشن لے رہے ہیں کم سے کم جرمانہ پچاس ہزار روپے کیا جاتا ہے اور کارخانہ سیل بھی ہو سکتا ہے بھٹہ مالکان چند سکوں یا مالی فوائد کے لئے لاکھوں انسانوں کی زندگی کو خطرے میں نہ ڈالیں اور ایسے آلات نصب کریں جس سے آلودگی کم سے کم پھیلے پہلے پہلے تو ہمیں سموگ اور فضائی آلودگی کا احساس اس لیے نہیں ہوتا تھا کہ ہم اسے سردیوں میں دھند یعنی فوگ سمجھتے تھے

 

سموگ دراصل دھوئیں یعنی سموک اور دھند یعنی فوگ کے مرکب کو کہتے ہیں اس کا ظہور اس وقت ہوتا ہے جب آتش گیر ایندھن سے خارج ہونے والے اخراج سورج کی روشنی کے ساتھ رد عمل دیتا ہے سردیوں کے اوائل میں جب ہوا کم درجہ حرارت کے باعث بھاری ہوتی ہے تو فضائی آلودگی اس کے ساتھ مل کر ماحول میں ایک تہہ سی پیدا کرتی ہے جس سے گمان ہوتا ہے کہ شاید فضا ابر آلود ہے لیکن درحقیقت یہ تہہ سورج کی روشنی اور زمین کے درمیان ایک جھلی کی طرح حائل ہو جاتی ہے اگر اس کے نقصانات کا ذکر کریں تو وہ یہ ہیں کہ سموگ آنکھوں اور گلے کو پریشان کرسکتی ہے اور پھیپھڑوں کو بھی نقصان پہنچا سکتی ہے، خاص کر بچوں، بزرگ شہریوں، اور باہر کام کرنے والے یا ورزش کرنے والے افراد کو یہ ان لوگوں کے لئے بھی بدتر ہے جو دمہ یا الرجی میں مبتلا ہوتے ہیں ترقی پذیر ممالک میں ناکافی قانون سازی اور مناسب پالیسیوں کی عدم دستیابی کے نتیجے میں فضائی آلودگی کی اونچی سطح کی وجہ سے بیماریوں کے واقعات ہوتے ہیں جو معاشرے پر بلا شبہ ایک بھاری مالی بوجھ بھی ہیں ابھی بھی ہم سے اکثر لوگوں کو علم نہیں ہے کہ ہوا کی کم رفتار نمی پلوشن کے ساتھ ملکر سموگ کو جنم دیتی ہے

 

ماہورین کے مطابق لاہور میں 63فیصد سموگ موٹر سائیکل اور چنگ چی رکشے کی وجہ سے ہے موٹر کار اور جیپ وغیرہ کی وجہ سے 11فیصد سموگ ہوتی ہے لاہور میں گزشتہ دہائی میں موٹر سائیکل اور رکشے کی فروخت میں 460فیصد اضافہ ہوا ہے شیخوپورہ اور اوکاڑہ میں فصلوں کی باقیات جلانے کے واقعات بڑھ رہے ہیں اب سموگ کے خطرے کا موسم سر پر ہے اور پنجاب حکومت کا لاہور میں قائم سموگ کنٹرول روم فضائی آلودگی کی روک تھام کی سرگرمیوں کی مانیٹرنگ کے لئے سر گرم عمل ہے اس وقت لاہور دنیا کا سب سے آلودہ شہر ہے لاہور کے آلودہ ترین علاقے کا اے کیو آئی کبھی 180 سے اوپر نہیں گیاتھا جبکہ بھارتی پنجاب میں فصلوں کی باقیات جلانے کے اثرات پاکستان کے سرحدی علاقوں پر بھی پڑتے ہیں پنجاب حکومت نے ورلڈ بینک سمیت عالمی فورمز پر بھارت میں فصلیں جلانے کا معاملہ بھی اٹھایا ہوا ہے جہاں تک فصلوں بالخصوص دھان کی باقیات جلانے کا تعلق ہے تو دور دراز کے دیہات میں اس بری عادت کا تدارک نہایت مشکل کام ہے کسان بھائیوں کی اکثریت کو دفعہ 144 کے نفاذ کا یا تو پتہ ہی نہیں ہوتا یا وہ اسے خاطر میں نہیں لاتے ایک اسسٹنٹ کمشنر کے لئے پوری تحصیل پر نظر رکھنا بہت مشکل کام ہے

 

پنجاب حکومت نے اس مسئلے کا حل یہ نکالا کہ پہلی بار خلائی تحقیق کے قومی ادارے سپارکو کے سیٹلائٹ کی مدد سے دور دراز کے علاقوں میں مانیٹرنگ کی جا رہی ہے اب کسی ضلع میں فصلیں جلانے کی اطلاع فوراً متعلقہ ڈپٹی کمشنر کو دی جاتی ہے جو متعلقہ پٹواری یا ریونیو سٹاف کے ذریعے کارروائی کرتا ہے محکمہ تحفظ ماحول پنجاب کی طرف سے آلودگی پھیلانے والے سینکڑوں صنعتی یونٹس کے خلاف کارروائی بھی کی گئی اتنی بڑی تعداد میں کارخانے بند کرنے کا مطلب یہ نہیں کہ فیکٹریاں تاحیات بند رہیں گی بلکہ فضائی آلودگی میں کمی لانے والے آلات کی تنصیب اور جرمانے کے بعد انہیں کھول دیا جاتا ہے فیکٹریوں کے علاوہ سموگ پھیلنے کی سب سے بڑی وجہ گاڑیوں کا دھواں بھی ہے اور اینٹی سموگ سکواڈز لاہور کے داخلی راستوں پر دھواں پھیلانے والی گاڑیوں پر نظر رکھ رہے ہیں فضائی آلودگی کی وجہ سے بیماریوں کے بڑھتے ہوئے خطرے کے سبب نگران وزیر اعلیٰ پنجاب محسن نقوی نے سموگ کے تدارک کے لئے اربن سڑکوں کو ڈسٹ فری کرنے کا فیصلہ کیاگیاہے اور اس سلسلہ میں ایل ڈبلیو ایم سی کو لاہور کی سڑکیں واش کرنے کا ٹاسک سونپ دیاگیا

 

خاص کر لاہور کی سڑکوں پر جاری تعمیراتی کام کو جلد از جلد مکمل کرنے کی ہدایت بھی جاری کی گئی ہیں تاکہ سڑک پر ٹریفک جام کا مسئلہ نہ ہو جبکہ ماہرین اورسٹیک ہولڈرزکی مشاورت سے ماحولیاتی پالیسی میں ترامیم اورفضائی آلودگی (سموگ) کو کنٹرول کرنے کیلئے فریم ورک کو حتمی شکل دی گئی ہے اب صوبہ بھر کی ضلعی انتظامیہ نے تمام سٹیل ملوں اور فیکٹریوں میں غیر معیاری ایندھن کے استعمال کی پابندی پر سختی سے عملدر آمد کروا رہی ہے اس وقت ماحولیاتی آلودگی کے عوامل میں 43فیصد کا تعلق ٹرانسپورٹ، 25فیصد کا انڈسٹری،12فیصد کا پاور اور 20فیصد کا زراعت کے شعبے سے ہے ماحولیاتی آلودگی پھیلانے والوں کیخلاف کارروائی کیلئے خصوصی سموگ اسکواڈز تشکیل دیئے گئے ہیں جبکہ گاڑیوں کی فٹنس چیک کرنے کیلئے وہیکل انسپکشن اینڈ سرٹیفیکیشن سسٹم (VICS)متعارف کرایا گیا ہے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
79385