2014 07
ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

آذادی اورانقلاب مارچ

دل کی بات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سائرہ سید

 

عمران خان اور ڈاکٹر طاہرالقادری دونوں ھی شاندار قسم کے انسان ھیں- خدا نے دونوں کو بے پناہ صلاحیتوں سے نوازا ہے-بلکہ یہ کہنا بےجا نہ ہوگا کہ یہ دونوں اشخاص ہمارے ملک کا قیمتی اثاثہ ھیں.

عمران خان کو نہ صرف کرکٹ کے حوالے سے جانا جاتا ہے بلکہ ان کی تعلیم اور صحت تے حوالے سے خدمات کو بھی دنیا میں قدر کی نگاہسے دیکھا جاتا ھہے-ابہی تک ان پر کرپشن کا بھی کوئ داغ نھی لگا اور ان کی بات کو باہر کی دنیا میں بھی اہمیت دی جاتی ہے-اسی طرح ڈاکٹر قادری کا انکی تقاریر اور تحریروں کے حوالے سے بڑا نام ہے-یہ ھمارے مئلک کے واحد عالم دین ہیں جنکو باھر کی دنیا میں بھی شوق سے سنی جاتی ہے اور ان کی سرپرستی میں چلنے والے اداروں میں لوگ بڑے اعتماد اور شوق کے ساتھ چندہ دیتے ہیں-

اب آتے ہیں اصل بات تی طرف کہ ھمارا ملک ایک عرصے سے دہشت گردی اور بجلی کی لوڈ شڈنگ کے عزاب میں مبتلا ہے اور یہان کا ھر باسی ان دونوں مساٰئل کی وجہ سے کسی نہ کسی حد تک نفسیاتی مریض بن چکا ہے-یہ بھی ایک حقیقت یے کہ پچھلی حکومتوں نے ان مسائیل کی حل کی طرف پر کوئ خاص توجہ نہی دی بلکہ اپنا وقت کسی طرح گزار کے چلے گئے-اب ملک میں ایک جمہوری حکومت چل رہی ہے اور پہلی دفعہ حکومت کم از کم ان دو بڑے مسائیل کو سنجیدگی کے ساتھ لے رہی ہے-دہشت گردی کا جڑ اکھاڑنے کیلئے پاک فوج گلی کوچوں سے لیکر پہاڑوں کی چو ٹیوں تک حالت جنگ میں ہے -دوسری طرف ھمیں بجلی کی لوڈشیڈنگ کے عذاب سے نکالنے کے لیے پاورسیکٹرمیں ھمارا عظیم دوست چین پنتیس ارب ڈالر کی خطیر سرمایہ کاری کر رہا ہے-کئی ایک اختلافات کے باوجود پاک فوج اور حکومت دونوں ملک کی بہترین مفاد میں ایک دوسرے کو برداشت کر رہے ہیں-

اب جب کہ ملک صحیح سمت میں چلنا شروع کیا ھی تھا کہ اچانک سے دو بڑے مسائیل سر اٹھالیئےھیں -عمران خان صاحب کو اب یاد آ گیاہے کہ چونکہ انکے ساتھ ڈیڑھ سال پہلے دھاندلی کی گئی جسکی وجہ سے وہ وزیرآعظم نہی بن سکے تھے اب وقت ہے کہ حکومت کا بوریا بستر لپیٹ کے دوبارہ الیکشن کرایا جائے تاکہ وفاق میں بھی انکی حکومت ھو- حلانکہ وہ یہ بھول گئے ہیں کہ کے پی کے، کے لوگوں نے اپنے بےپناہ مسائیل کو حل کرنے کیلئے انھیں صوبے کا اقتداردیا ہے-لوگون کا خیال تھا کہ خان صاحب دوسروں سے مختلف ثابت ھونگے-لیکن انکا خواب صرف خواب ھی ثابت ھوا-جوکچھ ترقیاتی کام پھلے سے چل رہے تھے جسکی وجہ سے لوگوں کو روزگار مل رہا تھا اور معیشت کا پہیہ چل رہا تھا-خان صاحب نے سوچا کہ چونکہ پاکستان میں کرپشن بہت ھے اور کرپشن کو کنٹرول کرنا بہت مشکل کام ہے اسلیے تمام ترقیاتی کاموں کو ھی بند کیا گیا

خان صاحب کیلئے یہان  طیب اردگان کی مثال دونگی جو ایک مئیر سے وزیراعظم کیسے بنے ھیں- وہ پہلے استانبول شھرکوبطورمئیر بناکردنیا کو دیکھا دیا پھرانکے کام اور پرفارمنس ہی دیکھکر ترک عوام نے ایک شہرسے پورے ملک کیلئے حکمران بنادیا -ان کی قیادت میں اب ترکی کہان کھڑا ہے یہ ھم سب جانتے ہیں جبکہ ترکی کا حال کچھ سالوں پھلے تک ھم سے بھی بدتر تھا-اس طرح خان صاحب بھی پہلے اگر کے پی کے کوہی ٹھیک کرلے تو مجھے یقین ہے کہ باقی ملک عوام خود انکو حوالہ کر دینگے-

اسی طرح ڈاکٹر قادری صاحب سینکڑوں کتابوں کے مصنف ہیں-کئی ممالک میں انکے چیرٹی ادارےکمیابی سے چل رہے ھیں-کئ ایک ٹی وی چنل کے علاوہ وہ دنیا کے کئی یونیورسٹیوں می بھی ڈاکٹر صاحب لیکچر دیتے رہتے ھیں-وہ جب بولتے ہیں تو بڑے بڑے بولنے والےبھی انہیں سننے پر مجبور ھوجاتے ہیں- ڈاکٹر صاحب کو چاہیے کہ اپنے اس نیک کاموں کو جاری رکھے بلکہ پورے پاکستان میں پھلائے تاکہ ان کی علم سے سب لوگ مستفید ھوں-ان کے علم اور کام سے دنیا کے سامنے پاکستان اور اسلام کا بہترتصور اور اچھا پیغام جائےگا-

لیکن صد افسوس کے ساتھ اب تک لگ رہا ہے کہ یہ دونوں حضرات بجائے ملک کو اور مستحکم کرنے کے١٤اگست تک اسلاماباد پر چڑھائی کا فیصلہ کر چکے ہیں-خان صاحب اپنی ضد پردوبارہ الیکشن چاہتے ہیں جبکہ ڈاکٹر صاحب ملک میں بغیر الیکشن کے انقلاب لانا چاہتے ھیں جسکے نتیجے ان کو اقتدار ملے-ان دونوں لیڈران کی اسلاماباد پر چڑھائی کے نتیجے میں جسکا بھی جیت ھو نقصان صرف اور صرف پاکستان اورغریب عوام کا ھی ھوگا-

ملک میں خدا نا خواستہ خانہ جنگی کی صورت میں سونامی خان اور میاں برادران لندن بھاگ جائیگے- ڈاکٹر صاحب واپس کنیڈا فرار ھونگے اور زرداری صاحب دبئی میں واقع اپنے محل میں شاہانہ زندگی گزارینگے- چوھدری لوگ کالی چشمہ لگاکے اللھ کے فضل و کرم سے کسی طرح سے گزارہ کر ھی لینگے-رہ گیا شیخ چلی, انہیں نہ گھرکی فکرنہ بچوں کا غم، انکاخرچہ کوئی اورنہ صحیح ٹی وی چنل والے ہی اٹھا لینگے-پیچھے رہ گئے ھم اور غریب عوام تو ھمارا مقدر شاید وہی ھو جو آچ کل لبیا،شام،مصر،افغانستان اور عراق کے بد قسمت عوام کا ہے.

آخر میں تمام سیاستدانوں سے ہاتھ جوڑ کر گزارش ہے کہ ملک کو خدارا چلنے دیجئے،ملک کو روز روز سیاسی اکھاڑہ مت بنائے،ہمارے آئندہ کے نسلوں پررحم کیجئے- اور آپ سب سے بھی درخواست ہے کہ پاکستان کی سلامتی اور ان خود غرض سیاستدانوں کی اصلاح کیلئےدل سے دعا کیجئے-


 

 

 

 


  mail to us at: chitraltimes@gmail.com
| ﺻﻔﺤﻪ ﺍﻭﻝ | ﭼﺘﺮﺍﻝ ﺍﻳﮏ ﺗﻌﺎﺭﻑ | ﻣﻮﺳﻡ | ﺧﻄﻮﻁ | ﺷﻌﺮﻭﺷﺎﻋﺮﻯ | ﺗﺼﺎﻭﻳﺮ | ﺧﻮﺍﺗﻴﻦ | ﻫﻤﺎﺭﻯ ﺑﺎﺑﺖ |
Managed by: FAIZ webmaster@chitraltimes.com Powered by: Schafei