:: Front Page

:: Your Letters

:: Articles

:: Weather Updates

:: Poetry

:: Chitral Info

:: Pictures

:: About Us

 

 

 

 

 

 

 

      December 30, 2013

Detail




جنسی امراض, بچاؤ کے طریقے


Today I came across a letter on the subject, which was published in your esteemed online paper, written by one of our sisters from Aga Khan University some times back in March 2012. In response to that I would like to take the opportunity of having say some thing about our religion Islam, which has the remedy of all the ailings including the social, spiritual, physical illnesses apart from the management of economy on family and on state basis. The condition is as to how much the human beings especially the Muslims take the opportunity of acting upon the sayings of Allah (SWT) and the Prophet Mohammad (PBUH)?

Unfortunately, we, the Muslims always shy of practicing the Islamic Teachings right in the light of the Quran and Sunnah with the fear that some body from the so called developed world would brand us with conservationist, and only ready to come to act upon of the same teachings when the members of the developed nations prove it by carrying out researches on the sayings of Allh (SWT) and the Prophet (PBUH) for their worldly gains/benefits. As a matter of fact, each and every thing has been derived from the Holy Quran and the Sunnah (precedents) of the Holy Prophet (PBUH). As far as Science is
concerned, it is tertiary of tertiary of tertiary of tertiary rather below to that of what the Holy Quran has said. Alhamdulillah more than 85% of the Quranic sayings have been proved by the science as correct.

However, regarding the phrases I wrote above and in reply to the sister's letter please refere to the reproduced Hadith, which has been said exactly on the topic by the Prophet (PBUH) some 14 hundred years ago (the letter is also appended):



 


جنسی امراض, بچاؤ کے طریقے
جنسئ امرا ض سے مراد وہ بیما ریاں ہیں جوغیر محفوظ جنسی رطوبتوں کےتبادلہ اورجنسی اعضاء کے آپس میں رگڑ کھانے سے ایک افراد سے دوسرے فرد کو لگتی ہے
 پھیلاؤ  کے طریقے
        حاملہ عورت سے پیدا ھونے والے بچے کو  منتقل ھونا
غیر.محفوظ آلات جراحی کا استعمال دورآن آپریشن، زچگی، خاندانی منصوبہ بندی
. مختلف ادویات، صابن یا دیگر اشیاہ سے فرج کی صفائی کرنا
جراثیم کا فرج ، معقد اورمنہ سے کیےجانے والے غیر محفوظ جنسی ملاپ کے
دوران ایک دوسرےکو پھیلنا
سرنج یا کسی بھی متاثرہ سوی سے
.متاثرہ خون یا خون کے اجزاہ منتقل سے
.اور رگھرنے سے جنسی ملاپ کے دوران اعضاء کے آپس میں ملنے
جنسی امرا ض سے بچاؤ
. متاثرین جنسی ملاپ سے پرھیز کریں یا پھر دوران ملاپ کنڈوم کا استعمال کریں
.گھر کے تمام افراد کو خون کی جانچ کروانی چاھیے
. جنسی اعضاء کے اعطراف بالوں کی باقائدہ صفائی انتہاہی ضروری ہے
. ضوری ہے کہ انجکشن یا سوی لگوانے کے لیے نئی اور پیکٹ والی سوئی استمعال کی جاے
ھیپا ٹائٹس بی کے ٹیکوں کا حفاظتی کورس مکمل طریقے سے کروانا چاہیے
 ایک دفعہ استمعال کرنے کے بعد سرنج کو ایسے ضایع کیا جاے کہ دوبارہ
استمعال کے قابل نہ رہے.
. دانت نکلوانے/ کان چھدوانے، شیو کروانے یا آپریشن اور زچگی کے لیے
استمعال کرنے والے تمام اوزار ان جراثیم سے پاک ہونے چائیے
. دانوں پر کجھلی نہ کریں۔ کجھلی کی جگہ کو خشک رہنے دیں۔ دوا کے لیے
ڈاکٹر سے رجوع کریں
کنڈوم خریدنے یا استعمال کرنے کیلیے کھولنے سے پہلے اس کے قابل استعمال
رہنے کی معیاد ختم ہونے کی تاریخ  ضرور دیکھ لیں۔ اگر تاریخ گزر چکی ہو
تواسے ہرگز استعمال ناکریں
مریم پیارعلی

 

 

Aga Khan University Hospital Karachi
Book Eight: The Book of Virtues
Chapter 215- The Excellence of using Miswak (Tooth-Stick) 1203. Abu Hurairah (May Allah be pleased with him) reported: The Prophet (sallallaahu ’alayhi wa sallam) said, "There are five acts which conform to the pure nature: Circumcision, removing of the pubic hair, clipping the nails, plucking the underarm hair and trimming the moustache.'' [Al-Bukhari and Muslim].
Commentary:  "Fitrah" literally means beginning, innovation, invention or making something altogether new, but here it means instinct or such nature or disposition which is inborn. Some people have defined it as that old way which was liked by all the Prophets and on which all the Divine laws had full agreement. That is to say, they are natural to man. In any case, one should adopt all these five good qualities in such a way as if they are a part of his nature. Moreover, they are
also highly important from the point of view of cleanliness and
purification.



8- كتَاب الفَضَائِل
215- باب فضل السواك وخصال الفطرة
1203- وعن أَبي هريرة رضي الله عنه، عن النبيِّ صلى الله عليه وسلم،
قَالَ: ((الفِطْرَةُ خَمْسٌ، أَوْ خَمْسٌ مِنَ الفِطْرَةِ(1): الخِتَانُ،
وَالاسْتِحْدَادُ، وَتَقْلِيمُ الأظْفَارِ، وَنَتْفُ الإبطِ، وَقَصُّ
الشَّارِبِ)) متفقٌ عَلَيْهِ.
((الاستحْدَادُ)): حَلقُ العَانَةِ، وَهُوَ حَلْقُ الشَّعْرِ الَّذِي
حَولَ الفَرْجِ.
أخرجه: البخاري 7/206 (5889)، ومسلم 1/152-153 (257) (49).
الفطرة : أي من السنة، يعني سنن الأنبياء عليهم السلام التي أُمرنا أن
نقتدي بهم فيها. النهاية 3/457.
8 – کتاب الفضائل
۲۱۵- مسواک کی فضیلت اور فطری چیزوں کا بیان
۸/۱۲۰۳- حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے ، نبی صلی اللہ علیہ
وسلم نے فرمایا، فطری چیزیں پانچ ہیں یا (فرمایا) پانچ چیزیں فطری ہیں۔
ختنہ کرنا، زیر ناف کے بال صاف کرنا، ناخن تراشنا، بغل کے بال اکھیڑنا
اور مونچھیں کٹوانا۔ (بخاری ومسلم)
الاستحداد، زیر ناف کے بال صاف کرنا، یہ ان بالوں کا مونڈھنا ہے جو شرم
گاہ کے ارد گرد ہوتے ہیں۔
تخريج: صحيح بخاري، كتاب اللباس، باب قص الشارب. وصحيح مسلم، كتاب
الطهارة، باب خصال الفطرة.
فوائد: فطرت کے لغوی معنی ہیں، ابتداء اختراع (گھڑنا) یا ایسی چیز بنانا
جس کی پہلے کوئی مثال نہ ہو۔ لیکن یہاں مراد وہ جبلت یعنی مزاج وطبیعت ہے
جس پر انسان کی ولادت ہوئی ہے۔ بعض نے اس کی تعریف اس طرح کی ہے، وہ قدیم
طریقہ، جسے انبیاء نے پسند فرمایا تھا اور تمام قدیم شریعتیں اس پر متفق
رہیں گویا کہ وہ پیدائشی معاملہ ہے۔ بہرحال مذکورہ پانچوں خصلتوں پر اس
طرح عمل کرنا چاہئے، جیسے یہ انسان کی فطرت اور خمیر کا حصہ ہیں علاوہ
ازیں طہارت و نظافت کے اعتبار سے ان کی بڑی اہمیت ہے۔


I hope that this small effort of mine will act as an eye opener for all of us. May Allah (SWT) guide us towards His appeasement (Ameen).

Best Regards

Bashir Ahmad
Lahore

 

mail @ chitraltimes@gmail.com

| Front Page | Chitral | Advertisement | Weather | About Us | Bookmark Us |